Aaj lab-e guhar-fishan aap ne waa nahin kiya – Jaun Elia Ghazal

آج لبِ گہر فشاں آپ نے وا نہیں کیا
تذکرۂ خجستۂ آب و ہوا نہیں کیا

Aaj lab-e guhar-fishan aap ne waa nahin kiya,
tazkira-e khajista-e ab-o hawa nahin kiya.

کیسے کہیں کہ تجھ کو بھی ہم سے ہے واسطہ کوئی
تو نے تو ہم سے آج تک کوئی گلہ نہیں کیا

Kaise kahen ki tujh ko bhi hum se hai wasta koi,
tune toh hum se aaj tak koi gila nahin kiya.

جانے تری نہیں کے ساتھ کتنے ہی جبر تھے کہ تھے
میں نے ترے لحاظ میں تیرا کہا نہیں کیا

Jaane teri nahin ke saath kitne hi jabr the ki the,
maine tere lihaaz mein tera kaha nahin kiya.

مجھ کو یہ ہوش ہی نہ تھا تُو مرے بازوؤں میں ہے
یعنی تجھے ابھی تلک میں نے رہا نہیں کیا

Mujh ko ye hosh hi na tha tu mere baazuon mein hai,
yaani tujhe abhi talak maine riha nahin kiya.

تُو بھی کسی کے باب میں عہد شکن ہو غالباً
میں نے بھی ایک شخص کا قرض ادا نہیں کیا

Tu bhi kisi ke baab mein ahd-shikan ho ghaliban,
maine bhi ek shakhs ka qarz ada nahin kiya.

ہاں وہ نگاہِ ناز بھی اب نہیں ماجرا طلب
ہم نے بھی اب کی فصل میں شور بپا نہیں کیا

Haan woh nigaah-e naaz bhi ab nahin majra-talab
hum ne bhi ab ki fasl mein shor bapa nahin kiya. !!

(جون ایلیا)

Also Read : Dil ka dayar-e-KHwab mein dur talak guzar raha – Jaun Elia

Spread the love
  • 8
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *