Aap Apna Ghubar The Hum Toh – Jaun Eliya Ghazal

آپ اپنا غبار تھے ہم تو​
یاد تھے یادگار تھے ہم تو​
پردگی! ہم سے کیوں رکھا پردہ​
تیرے ہی پردہ دار تھے ہم تو​

Aap apna ghubar the hum toh,
yaad the yaadgar the hum toh.

Pardagi hum se kyon rakha parda,
tere hi pardadaar the hum toh.

وقت کی دھوپ میں تمہارے لیے​
شجرِ سایہ دار تھے ہم تو​
اُڑتے جاتے ہیں دھُول کے مانند​
آندھیوں پر سوار تھے ہم تو​

Waqt ki dhoop mein tumhare liye,
shajar-e saayadaar the hum toh.

Ude jaate hain dhool ke maanind,
aandhiyon par sawaar the hum toh.

ہم نے کیوں خود پہ اعتبار کیا​
سخت بے اعتبار تھے ہم تو​
شرم ہے اپنی بار باری کی​
بے سبب بار بار تھے ہم تو​

Hum ne kyon khud pe aitbaar kiya,
sakht be’aitbaar the hum toh.

Sharam hai apni baar baari ki,
be’sabab baar baar the hum toh.

کیوں ہمیں کر دیا گیا مجبور​
خود ہی بے اختیار تھے ہم تو​
تم نے کیسے بُھلا دیا ہم کو​
تم سے ہی مستعار تھے ہم تو​

Kyon humein kar diya gaya majboor,
khud hi be’ikhtiyaar the hum toh.

Tumne kaise bhula diya hum ko,
tum se hi mustaar the hum toh.

خوش نہ آیا ہمیں جیے جانا​
لمحے لمحے پہ بار تھے ہم تو​
سہہ بھی لیتے ہمارے طعنوں کو​
جانِ من جاں نثار تھے ہم تو​

Khush na aaya hamein jiye jaana,
lamhe lamhe pe baar the hum toh.

Seh bhi lete humare taano ko,
jaaneman jaan’nisaar the hum toh.

خود کو دورانِ حال میں اپنے​
بے طرح ناگوار تھے ہم تو​
تم نے ہم کو بھی کر دیا برباد​
نادرِ روزگار تھے ہم تو

Khud ko dauraan-e haal mein apne,
betarah naagawaar the hum toh.

Tumne hum ko bhi kar diya barbaad,
naadir-e rozgaar the hum toh.

ہم کو یاروں نے یاد بھی نہ رکھا​
جون یاروں کے یار تھے ہم تو​

Hum ko yaaron ne yaad bhi na rakha,
Jaun’ yaaron ke yaar the hum toh. !!

Also Read : Aaj lab-e guhar-fishan aap ne waa nahin kiya – Jaun Elia Ghazal

Spread the love
  • 9
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *