Ajab Ek Shor Sa Barpa Hai Kahin.. Jaun Elia

ابھی اک شور سا اٹھا ہے کہیں​
کوئی خاموش ہوگیا ہے کہیں​
ہے کچھ ایسا کہ جیسے یہ سب کچھ​
اس سے پہلے بھی ہوچکا ہے کہیں​

Abhi ik shor sa utha hai kahin,
Koi khamosh ho gaya hai kahin,

Hai kuch aesa ke jaise yeh sab kuch,
Is se pehle bhi ho chuka hai kahin,

تجھ کو کیا ہوگیا کہ چیزوں کو​
کہیں رکھتا ہے ڈھونڈتا ہے کہیں​
جو یہاں سے کہیں نہ جاتا تھا​
وہ یہاں سے چلا گیا ہے کہیں​

Tujh ko kya ho gaya ke cheezon ko,
Kahin rakhta hai dhoondta hai kahin,

Jo yahan se kahin na jaata tha,
Woh yahan se chala gaya hai kahin,

آج شمشان کی سی بو ہے یہاں​
کیا کوئی جسم جل رہا ہے کہیں​
ہم کسی کے نہیں جہاں کے سوا​
ایسی وہ خاص بات کیا ہے کہیں​

Aaj shamshaan ki si buu hai yahan,
Kya koi jism jal raha hai kahin,

Hum kisi ke nahin jahan ke siwa,
Aesi woh khaass baat kahan hai kahin,

تو مجھے ڈھونڈ میں تجھے ڈھونڈوں​
کوئی ہم میں سے رہ گیا ہے کہیں​
کتنی وحشت ہے درمیانِ ہجوم​
جس کو دیکھو گیا ہوا ہے کہیں​

Tu mujhe dhoond main tujhe dhoondhon,
Koi hum main se reh gaya hai kahin,

Kitni wehshat hai darmeyan-e-hujoom,
Jis ko dekho gaya hua hai kahin,

میں تو اب شہر میں کہیں بھی نہیں​
کیا مرا نام بھی لکھا ہے کہیں​
اسی کمرے سے کوئی ہوکے وداع​
اسی کمرے میں چھپ گیا ہے کہیں​

Main to ab sheher main kahin bhi nahin,
Kya mera naam bhi likha hai kahin,

Isi kamre main koi ho ke vidaa,
Isi kamre main chup gaya hai kahin,

مل کے ہر شخص سے ہوا محسوس​
مجھ سے یہ شخص مل چکا ہے کہیں​

Mil ke har shakhs se hua mehsus,
Mujh se yeh shakhs mil chuka hai kahin..

Jaun Elia

Also Read : Aadmi Waqt Par Gaya Hoga – Ghazal by Jaun Eliya

Spread the love
  • 2
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *