Aye Wasl Kuchh Yahan Na Hua Kuchh Nahi Hua.. Jaun Elia

اے وصل کچھ یہاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا
اس جسم کی میں جاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

تو آج میرے گھر میں جو مہماں ہے عید ہے
تو گھر کا میزباں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

Aye wasl kuchh yahan na hua kuchh nahi hua,
uss jism ki main jaan na hua kuchh nahi hua.

Tu aaj mere ghar mein jo mehmaan hai Eid hai,
tu ghar ka mezbaan na hua kuchh na hua.

کھولی تو ہے زبان مگر اس کی کیا بساط
میں زہر کی دکاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

کیا ایک کاروبار تھا وہ ربط جسم و جاں
کوئی بھی رائیگاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

Kholi toh hai zabaan magar iss ki kya bisaat,
main zehar ki dukaan na hua kuchh nahi hua.

Kya ek kaarobaar tha woh rabt-e jism-o jaan,
koi bhi raigaan* na hua kuchh nahi hua.

کتنا جلا ہوا ہوں بس اب کیا بتاؤں میں
عالم دھواں دھواں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

دیکھا تھا جب کہ پہلے پہل اس نے آئینہ
اس وقت میں وہاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

Kitna jala hua hun bas ab kya bataaun main,
aalam dhuaan – dhuaan na hua kuchh nahi hua.

Dekha tha jab ki pehle – pehal usne aaina,
uss waqt main wahan na hua kuchh nahi hua.

وہ اک جمال جلوہ فشاں ہے زمیں زمیں
میں تا بہ آسماں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

میں نے بس اک نگاہ میں طے کر لیا تجھے
تو رنگ بیکراں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

Woh ek jamaal jalwa-fishan hai zameen – zameen,
main ta-ba-aasmaan na hua kuchh nahi hua.

Maine bas ek nighaah mein tayy kar liya tujhe,
tu rang-e bekaraan na hua kuchh nahi hua.

گم ہو کے جان تو مری آغوش ذات میں
بے نام و بے نشاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

ہر کوئی درمیان ہے اے ماجرا فروش
میں اپنے درمیاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

Ghum ho ki jaan tu meri aaghosh-e zaat mein,
benaam-o nishaan na hua kuchh nahi hua.

Har koi darmiyaan hai aye maajra-farosh,
main apne darmiyaan na hua kuchh nahi hua. !!

Jaun Elia

Also Read : Ajab Ek Shor Sa Barpa Hai Kahin.. Jaun Elia

Spread the love
  • 4
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *