Bahar bhi ab andar jaisa sannaata hai – Aanis Moeen

Bahar bhi ab andar jaisa sannaata hai,
dariya ke us paar bhi gehra sannaata hai.

Shor thame toh shayad sadiyaan beet chuki hain,
ab tak lekin sehma sehma sannaata hai.

باہر بھی اب اندر جیسا سناٹا ہے
دریا کے اس پار بھی گہرا سناٹا ہے
شور تھمے تو شاید صدیاں بیت چکی ہیں
اب تک لیکن سہما سہما سناٹا ہے

Kis se bolun ye toh ek sehra hai jahaan par,
main hun ya phir goonga behra sannaata hai.

Jaise ek toofaan se pehle ki khamoshi,
aaj meri basti mein aisa sannaata hai.

کس سے بولوں یہ تو اک صحرا ہے جہاں پر
میں ہوں یا پھر گونگا بہرا سناٹا ہے
جیسے اک طوفان سے پہلے کی خاموشی
آج مری بستی میں ایسا سناٹا ہے

Nayi sehar ki chaap na jaane kab ubhregi,
chaaron jaanib raat ka gehra sannaata hai.

Soch rahe ho socho lekin bol na padna,
dekh rahe ho shehar mein kitna sannaata hai.

نئی سحر کی چاپ نہ جانے کب ابھرے گی
چاروں جانب رات کا گہرا سناٹا ہے
سوچ رہے ہو سوچو لیکن بول نہ پڑنا
دیکھ رہے ہو شہر میں کتنا سناٹا ہے

Mehv-e-khwaab hain saari dekhne wali aankhen,
jaagne wala bas ek andha sannaata hai.

Darna hai toh anjaani aawaaz se darna,
ye toh ‘aanis’ dekha-bhaala sannaata hai. !!

محو خواب ہیں ساری دیکھنے والی آنکھیں
جاگنے والا بس اک اندھا سناٹا ہے
ڈرنا ہے تو انجانی آواز سے ڈرنا
یہ تو آنسؔ دیکھا بھالا سناٹا ہے

Also Read : Woh mere haal pe royaa bhi muskuraaya bhi – Aanis Moeen

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *