Bichhar Ke Tum Se Yeh Sochun by Mohsin Naqbi

BichhaR ke tum se yeh sochuN, K dil kahaaN jaaye
Sehar udaas kare, shaam raayegaaN jaaye
بچھڑ کے تجھ سے یہ سوچوں کہ دِل کہاں جائے؟
سحر اُداس کرے شام رائیگاں جائے

ZameeN – badar jo hue ho to mere ham-safaro
Chalay chalo K jahaaN tak yeh aasmaaN jaaye
زمیں بدر جو ہُوئے ہو تو میرے ہمسفرو
چلے چلو کہ جہاں تک یہ آسماں جائے

Tamaam shahr mein phailii hui hai tanhaayii
Ye dil jawaaN sahi, lekin kahaaN kahaaN jaaye
تمام شہر میں پھیلی ہُوئی ہے تنہائی
یہ دِل جواں سہی لیکن کہاں کہاں جائے

JaluN to yuN K azal jagmagaa uThe mujh se
BujhuN to yuN K abad tak mera dhuwaaN jaaye
جلوں تو یوںکہ ازل جگمگا اُٹھے مجھ سے
بجھوں تو یوں کی ابد تک مِرا دُھواں جائے

Abhi to dil se nikal kar zabaaN tak aayi hai
Kise khabar K kahaaN tak yeh daastaaN jaaye
ابھی تو دِل سے نکل کر زباں تک آئی ہے
کسے خبر کہ کہاں تک یہ داستاں جائے؟

Qadam-qadam pe hai zandaN ravish-ravish pe salib
Koi to ho jo K jo ab bahr E imtehaaN jaaye
قدم قدم پہ ہے زنداں روش روش پہ صلیب
کوئی تو ہو کہ جو اب بہرِ امتحاں جائے

BichhaR chalaa hai to meri duaa bhi leta ja
WahaaN-wahaaN mujhe paye, jahaaN-jahaaN jaye
بچھڑ چلا ہے تو میری دُعا بھی لیتا جا
وہاں وہاں مجھے پائے جہاں جہاں جائے

Main apne ghar ki taraf jaarahaa huN yuN ‘Muhsin’
K jaise luT ke, kisi ban mein kaarvaaN jaaye
میں اپنے گھر کی طرف جا رہا ہُوں یوں “محسن”
کہ جیسے لُٹ کے کسی بن میں کارواں جائے

محسن نقوی

Also Read : Jalaa Ke Tu Bhi Poetry By Mohsin Naqvi

Spread the love
  • 4
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *