Dil ka dayar-e-KHwab mein dur talak guzar raha – Jaun Elia

دل کا دیار خواب میں دور تلک گزر رہا
پاؤں نہیں تھے درمیاں آج بڑا سفر رہا

ہو نہ سکا ہمیں کبھی اپنا خیال تک نصیب
نقش کسی خیال کا لوح خیال پر رہا

dil ka dayar-e-khwab mein dur talak guzar raha
panw nahin the darmiyan aaj bada safar raha
ho na saka hamein kabhi apna khayal tak nasib
naqsh kisi khayal ka lauh-e-khayal par raha

نقش گروں سے چاہیئے نقش و نگار کا حساب
رنگ کی بات مت کرو رنگ بہت بکھر رہا

جانے گماں کی وہ گلی ایسی جگہ ہے کون سی
دیکھ رہے ہو تم کہ میں پھر وہیں جا کے مر رہا

naqsh-garon se chahiye naqsh o nigar ka hisab
rang ki baat mat karo rang bahut bikhar raha
jaane guman ki wo gali aisi jagah hai kaun si
dekh rahe ho tum ki main phir wahin ja ke mar raha

دل مرے دل مجھے بھی تم اپنے خواص میں رکھو
یاراں تمہارے باب میں میں ہی نہ معتبر رہا

شہر فراق یار سے آئی ہے اک خبر مجھے
کوچۂ یاد یار سے کوئی نہیں ابھر رہا

dil mere dil mujhe bhi tum apne khwas mein rakho
yaran tumhaare bab mein main hi na mo’tabar raha
shahr-e-firaq-e-yar se aai hai ek khabar mujhe
kucha-e-yaad-e-yar se koi nahin ubhar raha

Also Read :Wafa MeN Ab Yeh Hunar Ikhtiyaar Karna Hai by Mohsin Naqbi 

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *