Ho Jaayegi Jab Tum Se Shanasai Zara Aur – Aanis Moeen

Ho jaayegi jab tum se shanasaai zara aur,
badh jaayegi shayad meri tanhaai zara aur.

ہو جائے گی جب تم سے شناسائی ذرا اور

بڑھ جائے گی شاید مری تنہائی ذرا اور

Kyon khul gaye logon pe meri zaat ke asraar,
aey kaash ki hoti meri gehraai zara aur.

کیوں کھل گئے لوگوں پہ مری ذات کے اسرار

اے کاش کہ ہوتی مری گہرائی ذرا اور

Phir haath pe zakhmon ke nishaan gin na sakoge,
ye uljhi hui dor jo suljhaai zara aur.

پھر ہاتھ پہ زخموں کے نشاں گن نہ سکو گے

یہ الجھی ہوئی ڈور جو سلجھائی ذرا اور

Tardeed toh kar sakta tha phailegi magar baat,
iss taur bhi hogi teri ruswaai zara aur.

تردید تو کر سکتا تھا پھیلے گی مگر بات

اس طور بھی ہوگی تری رسوائی ذرا اور

Kyon tark-e-taalluq bhi kiya laut bhi aaya?
achchha tha ki hota jo woh harjaai zara aur.

کیوں ترک تعلق بھی کیا لوٹ بھی آیا؟

اچھا تھا کہ ہوتا جو وہ ہرجائی ذرا اور

Hai deep teri yaad ka raushan abhi dil mein,
ye khauf hai lekin jo hawa aayi zara aur.

ہے دیپ تری یاد کا روشن ابھی دل میں

یہ خوف ہے لیکن جو ہوا آئی ذرا اور

Ladna wahin dushman se jahan gher sako tum,
jeetoge tabhi hogi jo paspaai zara aur.

لڑنا وہیں دشمن سے جہاں گھیر سکو تم

جیتو گے تبھی ہوگی جو پسپائی ذرا اور

Badh jaayenge kuchh aur lahoo bechne waale,
ho jaaye agar shehar mein mehngaai zara aur.

بڑھ جائیں گے کچھ اور لہو بیچنے والے

ہو جائے اگر شہر میں مہنگائی ذرا اور

Ek doobti dhadkan ki sadaa log na sun lein,
kuchh der ko bajne do ye shehnaai zara aur. !!

اک ڈوبتی دھڑکن کی صدا لوگ نہ سن لیں

کچھ دیر کو بجنے دو یہ شہنائی ذرا اور

Also Read : Bahar bhi ab andar jaisa sannaata hai – Aanis Moeen

Spread the love
  • 3
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *