Ik karb-e-musalssal ki sazaa dein to kise dein – Aanis Moeen

اک کرب مسلسل کی سزا دیں تو کسے دیں
مقتل میں ہیں جینے کی دعا دیں تو کسے دیں

Ik karb-e-musalssal ki sazaa dein to kise dein,
Maqtal mein hain jeene ki dua dein to kisse dein,

پتھر ہیں سبھی لوگ کریں بات تو کس سے
اس شہر خموشاں میں صدا دیں تو کسے دیں

Pathar hain sabhi log karen baat to kis se,
Iss sheher-e-khamooshan mein sadaa dein to kisse dein,

ہے کون کہ جو خود کو ہی جلتا ہوا دیکھے
سب ہاتھ ہیں کاغذ کے دیا دیں تو کسے دیں

Hai kaun ke jo khud ko hi jaltaa hua dekhe,
Sab haath hain kaaghaz ke diyaa dein to kisse dein,

سب لوگ سوالی ہیں سبھی جسم برہنہ
اور پاس ہے بس ایک ردا دیں تو کسے دیں

Sab log savaali hain sabhi jism barhnaa,
Aur paas hai bas aik ridaa dein to kisse dein,

جب ہاتھ ہی کٹ جائیں تو تھامے گا بھلا کون
یہ سوچ رہے ہیں کہ عصا دیں تو کسے دیں

Jab haath hi katt jaayen to thaame ga bhalaa kaun,
Yeh soch rahe hain ke asaaa dein to kisse dein,

بازار میں خوشبو کے خریدار کہاں ہیں
یہ پھول ہیں بے رنگ بتا دیں تو کسے دیں

Bazaar mein khushbuu ke kharidaar kahan hain,
Yeh phuul hain be-rang bataa dein to kisse dein,

چپ رہنے کی ہر شخص قسم کھائے ہوئے ہے
ہم زہر بھرا جام بھلا دیں تو کسے دیں

Chup rehne ki har shakss qasam khaaye huye hai,
Hum zeher bharaa jaam bhulaa dein to kisse dein..

آنس معین

Also Read :Tu Mera hai – Aanis Moeen Shayari

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *