Jalaa Ke Tu Bhi Poetry By Mohsin Naqvi

Jala k tu bhi Agar aasra Na de Mujko,
Yeh khauf hai k HaWa phir bujha Na de Mujko

جلا کے تو بھی اگر آسرا نہ دے مجھ کو
یہ خوف ہے کہ ہوا پھر بجھا نہ دے مجھکو

Main is khayal Se mur mur k Dekhta hon usy,
Bichar k woh bhi Kahein phir sada Na de Mujko.

میں اس خیال سے مڑ مڑ کے دیکھتا ہوں اسے
بچھڑ کہ وہ بھی کہیں پھر صدا نہ دے مجھکو

Bas is khayal se Shab bhar main So nahi sakti,
K Khauf-e-Khwab-e-Guzishta Jaga na de Mujhko.

بس اس خیال سے شب بھر میں سو نہیں سکتا
کہ خوفِ خوابِ گزشتہ جگا نہ دے مجھکو

Terey Baghair Teri tarhan Main zinda rahon,
Yeh haosLa bhi Dua kar!khuda Na de Mujhko.

تیرے بغیر میں تیری طرح سے زندہ رہوں
یہ حوصلہ بھی دعا کرخدا نہ دے مجھکو

Main is liye bhi Usey khud Manaon ga ,
Ke Mujhse Rothny Wala, Bhula na de MuJh ko

میں اس لئے بھی اسے خود مناوں گا محسن
کہ مجھ سے روٹھنے والا کہیں بھلا نہ دے مجھکو

Spread the love
  • 2
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *