Kabhi Jo CheR Gayee Yaad-E-RaftagaaN Mohsin Naqvi

Kabhi jo cheR gayee yaad-E-raftagaaN Mohsin
Bikhar gayee haiN nigaaheN kahaaN kahaaN Mohsin
کبھی جو چھیڑ گئی یاد رفتگاں محسن
بکھر گئی ہیں نگاہیں کہاں کہاں محسن

Hawa ne raakh urraaii to dil ko yaad aayaa
K jal bujheeN mere khaabon ki bastiyaaN Mohsin
ہوا نے راکھ اڑائی تو دل کو یاد آیا
کہ جل بجھیں مرے خوابوں کی بستیاں محسن

Kuch aaise ghar bhi miley jin meN ghooNgatoN k iwaz
Hui haiN dafn dopattoN meN larrkiyaaN Mohsin
کچھ ایسے گھر بھی ملے جن میں گھونگھٹوں کے عوض
ہوئیں ہیں دفن دوپٹوں میں لڑکیاں محسنؔ

KhaNdar hai ahd-E-guzishta na chhu na chheR isay
KhuleN to band na hoN is ki khirrkiyaaN Mohsin
کھنڈر ہے عہد گزشتہ ، نہ چھو نہ چھیڑ اسے
کھلیں تو بند نہ ہوں اس کی کھڑکیاں محسن

Bujha hai kaun sitaaraa k apni aankh k saath
Huey haiN saare manaazir dhuaaN dhuaaN Mohsin
بجھا ہے کون ستارہ کہ اپنی آنکھ کے ساتھ
ہوئے ہیں سارے مناظر دھواں دھواں محسن

Nahi k us ne ganwaaye haiN maah O saal apne
Tamaam umr kaTi yuun bhi raaegaaN Mohsin
نہیں کہ اس نے گنوائے ماہ و سال اپنے
تمام عمر کٹی یوں بھی رائیگاں محسن

Mila to aur bhi taqseem kar gaya mujh ko
SameiTna theeN jisay meri kirchiyaaN Mohsin
ملا تو اور بھی تقسیم کر گیا مجھ کو
سمیٹنا تھیں جسے میری کرچیاں محسن

KahiN se us ne bhi toRa hai khud se rabt-E-wafa
Kahin se bhool gaya maiN bhi daastaaN Mohsin
کہیں سے اس نے توڑا خود سے ربط وفا
کہیں سے بھول گیا میں بھی داستاں محسن ​

Also Read : Ta’zeer-E-Ehtimaam-E-Chaman Kaun De Gaya by Mohsin Naqvi

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *