Kitne hi pairr khauf-e-khizaan se ujarr gaye by Aanis Moeen

کتنے ہی پیڑ خوف خزاں سے اجڑ گئے

کچھ برگ سبز وقت سے پہلے ہی جھڑ گئے

کچھ آندھیاں بھی اپنی معاون سفر میں تھیں

تھک کر پڑاؤ ڈالا تو خیمے اکھڑ گئے

Kitne hi pairr khauf-e-khizaan se ujarr gaye,
Kuch barg-e-sabzz waqt se pehle hi jharr gaye,

Kuch aandhiyaan bhi apnii muaavin safar mei theen,
Thak kar parrao daala to khaimay ukharr gaye,

اب کے مری شکست میں ان کا بھی ہاتھ ہے

وہ تیر جو کمان کے پنجے میں گڑ گئے

سلجھی تھیں گتھیاں مری دانست میں مگر

حاصل یہ ہے کہ زخموں کے ٹانکے اکھڑ گئے

Ab ke meri shikast mei un ka bhi haath tha,
Woh teer jo kamaan ke panjje mei garr gaye,

Suljhii theen guthiyaan meri daanist mei magar,
Haasil yeh hai ke zakhmon ke taanke ukharr gaye,

اس بند گھر میں کیسے کہوں کیا طلسم ہے

کھولے تھے جتنے قفل وہ ہونٹوں پہ پڑ گئے

بے سلطنت ہوئی ہیں کئی اونچی گردنیں

باہر سروں کے دست تسلط سے دھڑ گئے

Iss band ghar mei kya kahoon kya tilissm hai,
Khole they jitne qufl woh honnton pe parr gaye,

Be-saltanat huyi hain katti unchii gardnen,
Baahar saron ke dast-e-tasallut se dharr gaye..

Also Read : Ik karb-e-musalssal ki sazaa dein to kise dein – Aanis Moeen

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *