Lai phir ek laghzish-e-mastana tere shahr mein by Kaifi Azmi

لائی پھر اک لغزش مستانہ تیرے شہر میں
پھر بنیں گی مسجدیں مے خانہ تیرے شہر میں

lai phir ek laghzish-e-mastana tere shahr mein
phir banengi masjiden mai-KHana tere shahr mein

آج پھر ٹوٹیں گی تیرے گھر کی نازک کھڑکیاں
آج پھر دیکھا گیا دیوانہ تیرے شہر میں

aaj phir TuTengi tere ghar ki nazuk khiDkiyan
aaj phir dekha gaya diwana tere shahr mein

جرم ہے تیری گلی سے سر جھکا کر لوٹنا
کفر ہے پتھراؤ سے گھبرانا تیرے شہر میں

jurm hai teri gali se sar jhuka kar lauTna
kufr hai pathraw se ghabrana tere shahr mein

شاہ نامے لکھے ہیں کھنڈرات کی ہر اینٹ پر
ہر جگہ ہے دفن اک افسانہ تیرے شہر میں

shah-name likkhe hain khanDaraat ki har inT par
har jagah hai dafn ek afsana tere shahr mein

کچھ کنیزیں جو حریم ناز میں ہیں باریاب
مانگتی ہیں جان و دل نذرانہ تیرے شہر میں

kuchh kanizen jo harim-e-naz mein hain baryab
mangti hain jaan o dil nazrana tere shahr mein

ننگی سڑکوں پر بھٹک کر دیکھ جب مرتی ہے رات
رینگتا ہے ہر طرف ویرانہ تیرے شہر میں

nangi saDkon par bhaTak kar dekh jab marti hai raat
rengta hai har taraf virana tere shahr mein

Also Read : Kya Jaane Kis Ki Pyaas Bujhaane Kidhar Gayi- Kaifi Azmi Shayari

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *