Shakal uski thi dilbaroon jaisi by Mohsin Naqvi

Shakal Uski Thi Dilbaron Jaisi
Khud Thi Lekin Sitamgaron Jaisi

شکل اس کی تھی دلبروں جیسی
خو تھی لیکن ستمگروں جیسی

Uske Lab Thy Sukoot Ke Darya
Uski Aankhein Sukhanwaron Jaisi

اس کے لب تھے سکوت کے دریا
اس کی آنکھیں سخنوروں جیسی

Meri Parwaaz Jaan Mein Ha’il Hai
Saans Tootay Hoe Paron Jaisi

میری پرواز جاں میں حائل ہے
سانس ٹوٹے ہوئے پروں جیسی

Dil Ki Basti Mein Ronqein Hain Magar
Chand Ujrre Hoe Gharon Jaisi

دل کی بستی میں رونقیں ہیں مگر
چند اجڑے ہوئے گھروں جیسی

Koun Dekhe Ga Ab Saleebon par
Sooratein Wo Paimbaron Jaisi

کون دیکھے گا اب صلیبوں پر
صورتیں وہ پیمبروں جیسی

Meri Dunya Ke Badshahon Ki
Aadtein Hain Gadagaron Jaisi

میری دنیا کے بادشاہوں کی
عادتیں ہیں گداگروں جیسی

Rukh Pe Sahra Hain Piyas Ke Mohsin
Dil Mein Lehrein Samandaron Jaisi

رخ پہ صحرا ہیں پیاس کے محسن
دل میں لہریں سمندروں جیسی

محسن نقوی

Also Read : Tumhein Kis Ne Kaha Tha? by Mohsin

Spread the love
  • 3
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *