Uth Meri Jaan Mere Saath Hi Chalna Hai Tujhe – Aurat by Kaifi Azmi

Uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe
qalb-e-maahaul mein larzaan sharar-e-jung hain aaj
hausle waqt ke aur zeest ke yakrang hain aaj
aabgeenon mein tapaan walwala-e- sang hain aaj
husn aur ishq hum-aawaaz-o-hum-aahang hain aaj
jis mein jalta hun ussi aag mein jalna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe..

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

قلب ماحول میں لرزاں شرر جنگ ہیں آج

حوصلے وقت کے اور زیست کے یک رنگ ہیں آج

آبگینوں میں تپاں ولولۂ سنگ ہیں آج

حسن اور عشق ہم آواز و ہم آہنگ ہیں آج

جس میں جلتا ہوں اسی آگ میں جلنا ہے تجھے

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

Tere qadmon mein hai firdaus-e-tamaddun ki bahaar
teri nazron pe hai tehzeeb-o-taraqqi ka madaar
teri aaghosh hai gahwaara-e-nafs-o-kirdaar
taa-ba-kai gird tere wehm-o-tayyun ka hisaar
kaundh kar majlis-e-khalwat se nikalna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe..

Tu ki bejaan khilonon se behal jaati hai
tapti saanson ki haraarat se pighal jaati hai
ban ke seemab har ek zarf mein dhal jaati hai
zeest ke aahni saanche mein bhi dhlna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe..

تیرے قدموں میں ہے فردوس تمدن کی بہار

تیری نظروں پہ ہے تہذیب و ترقی کا مدار

تیری آغوش ہے گہوارۂ نفس و کردار

تا بہ کے گرد ترے وہم و تعین کا حصار

کوند کر مجلس خلوت سے نکلنا ہے تجھے

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

Zindagi johad mein hai sabr ke qaabu mein nahin
nabz-e-hasti ka lahoo kaampte aansoo mein nahin
udne khulne mein hai nik.hat kham-e-gesu mein nahin
jannat ek aur hai jo mard ke pahlu mein nahin
uss ki aazaad ravish par bhi machalna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe..

زندگی جہد میں ہے صبر کے قابو میں نہیں

نبض ہستی کا لہو کانپتے آنسو میں نہیں

اڑنے کھلنے میں ہے نکہت خم گیسو میں نہیں

جنت اک اور ہے جو مرد کے پہلو میں نہیں

اس کی آزاد روش پر بھی مچلنا ہے تجھے

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

Goshe goshe mein sulagti hai chita tere liye
farz ka bhes badalti hai qazaa tere liye
qahar hai teri har narm adaa tere liye
zehar hi zehar hai duniya ki hawa tere liye
rut badal daal agar phoolna phalna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe..

گوشہ گوشہ میں سلگتی ہے چتا تیرے لیے

فرض کا بھیس بدلتی ہے قضا تیرے لیے

قہر ہے تیری ہر اک نرم ادا تیرے لیے

زہر ہی زہر ہے دنیا کی ہوا تیرے لیے

رت بدل ڈال اگر پھولنا پھلنا ہے تجھے

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

Qadr ab tak teri tareekh ne jaani hi nahin
tujh mein shole bhi hain bas ashk-fishaani hi nahin
tu haqeeqat bhi hai dilchasp kahaani hi nahin
teri hasti bhi hai ek cheez jawaani hi nahin
apni tareekh ka unwaan badalna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe..

قدر اب تک تری تاریخ نے جانی ہی نہیں

تجھ میں شعلے بھی ہیں بس اشک فشانی ہی نہیں

تو حقیقت بھی ہے دلچسپ کہانی ہی نہیں

تیری ہستی بھی ہے اک چیز جوانی ہی نہیں

اپنی تاریخ کا عنوان بدلنا ہے تجھے

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

Tod kar rasm ke but band-e-qadaamat se nikal
zof-e-ishrat se nikal, weham-e-nazaakat se nikal
nafs ke kheenche hue halq-e-azmat se nikal
qaid ban jaye mohabbat toh mohabbat se nikal
raah ka khaar hi kya gul bhi kuchalna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe..

توڑ کر رسم کا بت بند قدامت سے نکل

ضعف عشرت سے نکل وہم نزاکت سے نکل

نفس کے کھینچے ہوئے حلقۂ عظمت سے نکل

قید بن جائے محبت تو محبت سے نکل

راہ کا خار ہی کیا گل بھی کچلنا ہے تجھے

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

Tod ye azm-shikan dagdaga-e-pand bhi tod
teri khaatir hai jo zanjeer woh saugandh bhi tod
tauq ye bhi zammurrad ka guluband bhi tod
tod paimana-e-mardaan-e-khirdmand bhi tod
ban ke toofaan chhalakna hai ubalna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe..

توڑ یہ عزم شکن دغدغۂ پند بھی توڑ

تیری خاطر ہے جو زنجیر وہ سوگند بھی توڑ

طوق یہ بھی ہے زمرد کا گلوبند بھی توڑ

توڑ پیمانۂ مردان خرد مند بھی توڑ

بن کے طوفان چھلکنا ہے ابلنا ہے تجھے

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

Tu falaatun-o-arastu hai tu zehra parveen
tere qabze mein hai gardun, teri thokar mein zameen
haan utha jald utha paa-e-muqqadar se jabeen
main bhi rukne ka nahin waqt bhi rukne ka nahin
ladkhadaayegi kahan tak ki sambhalna hai tujhe
uth meri jaan mere saath hi chalna hai tujhe …!!

تو فلاطون و ارسطو ہے تو زہرا پرویں

تیرے قبضہ میں ہے گردوں تری ٹھوکر میں زمیں

ہاں اٹھا جلد اٹھا پائے مقدر سے جبیں

میں بھی رکنے کا نہیں وقت بھی رکنے کا نہیں

لڑکھڑائے گی کہاں تک کہ سنبھلنا ہے تجھے

اٹھ مری جان مرے ساتھ ہی چلنا ہے تجھے

– Kaifi Azmi

Also Read : Lai phir ek laghzish-e-mastana tere shahr mein by Kaifi Azmi

Spread the love
  • 20
    Shares

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *