Wafa MeN Ab Yeh Hunar Ikhtiyaar Karna Hai by Mohsin Naqbi


Wafa meN ab yeh hunar ikhtiyaar karna hai
Woh sach kahay na kahay aaitebaar karna hai
وفا میں اب یہ ہنر اختیار کر نا ہے
وہ سچ کہے نہ کہے ، اعتبار کرنا ہے

Yeh tujh ko jaagtay rahnay ka shouq kab say huaa?
Mujhay to khair teraa intezaaar karna hai
یہ تجھ کو جاگتے رہنے کا شوق کب سے ہوا
مجھے تو خیر ترا انتظار کرنا ہے

Hawa ki zad meN jalanay haiN ansoN kay chiraagh
Kabhi yeh jashan sar E rahguzaar karna hai
ہوا کی زد میں جلانے ہیں آنسووں کے چراغ
کبھی یہ جشن سرِ راہ گزار کرنا ہے

Woh muskura kay naye waswasoN meN daal gaya
Khayaal tha K usay sharamsaar karna hai
وہ مسکرا کے نئے وسوسوں میں ڈال گیا
خیال تھا کہ اُسے شرمسار کرنا ہے

Misaal E shaakh E barhana khizaN ke rut meN kabhi
Khud apnay jism ko be – barg O baar karna hai
مثالِ شاخِ برہنہ ، خزاں کی رت میں کبھی
خود اپنے جسم کو بے برگ و بار کرنا ہے

Teray firaaq meN din kiss tarah kattaiN apnay
K shuGhal E shab to sitaray shumaar karna hai
تیرے فراق میں دن کس طرح کٹیں اپنے
کہ شغلِ شب تو ستارے شمار کرنا ہے

Chalo yeh ashak hi moti samajh kay baich aayaiN
Kissi tarah to hamaiN rozgaar karna hai
چلو یہ اشک ہی موتی سمجھ کے بیچ آئیں
کسی طرح تو ہمیں روزگار کرنا ہے

Kabhi to dil meN chhupay zakhm bhi numayaaN hoN
Qaba samajh kay badan taar taar karna hai
کبھی تو دل میں چھپے زخم بھی نمایاں ہوں
قبا سمجھ کے بدن تار تار کرنا ہے

Khuda khabar yeh koi zid K shouq hai ‘Mohsin’
Khud apni jaan kay dushman say payaar karna hai
خدا خبر یہ کوئی ضد کہ شوق ہے محسن
خود اپنی جان کے دشمن سے پیار کرنا ہے​

Also Read : Tark E Muhabbat Kar BaiThe Hum – Mohsin Naqvi

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *