Woh Kuchh Gehri Soch Mein Aise Doob Gaya Hai by Aanis Moeen

وہ کچھ گہری سوچ میں ایسے ڈوب گیا ہے
بیٹھے بیٹھے ندی کنارے ڈوب گیا ہے
Woh kuchh gehri soch mein aise doob gaya hai,
baithe baithe nadii kinaare doob gaya hai.

آج کی رات نہ جانے کتنی لمبی ہوگی
آج کا سورج شام سے پہلے ڈوب گیا ہے
Aaj ki raat na jaane kitni lambi hogi,
aaj ka sooraj shaam se pehle doob gaya hai.

وہ جو پیاسا لگتا تھا سیلاب زدہ تھا
پانی پانی کہتے کہتے ڈوب گیا ہے
Woh jo pyaasa lagta tha sailaab-zada tha,
paani paani kehte kehte doob gaya hai.

میرے اپنے اندر ایک بھنور تھا جس میں
میرا سب کچھ ساتھ ہی میرے ڈوب گیا ہے
Mere apne andar ek bhanwar tha jis mein,
mera sab kuchh saath hi mere doob gaya hai.

شور تو یوں اٹھا تھا جیسے اک طوفاں ہو
سناٹے میں جانے کیسے ڈوب گیا ہے
Shor toh yun utha tha jaise ek toofaan ho,
sanaatte mein jaane kaise doob gaya hai.

آخری خواہش پوری کر کے جینا کیسا
آنسؔ بھی ساحل تک آ کے ڈوب گیا ہے
Aakhiri khwaahish poori kar ke jeena kaisa,
aanis’ bhi saahil tak aa ke doob gaya hai. !!

Also Read : Ho Jaayegi Jab Tum Se Shanasai Zara Aur – Aanis Moeen

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *